Noha

Bohat Door Chaley Jaen Gay Lyrics Irfan Haider Noha

Bohat Door Chaley Jaen Gay Lyrics written in Urdu and English text recited by Noha Khuwan Irfan Haider. View and download Irfan Haider noha lyrics similar to lyrics of Bohat Door Chaley Jaen Gay on Khairilamal.

Dasween Ki Sahar Hony Sy Pehly
Beti Ko Bulaya Baba Ny
Aur Ro Ky Yeh Kaha
Aa Seeny Py So Jaa Akhri Baar

Yeh Akhri Shab Hai Kal Hum Na Rahen Gy
Is Khak Mein Hum So Jayen Gy
Bahut Door Chaley Jayen Gy

Is Dasht Mein Soyen Gy Tery Chahnay Walay
Allah Tujhy Beta Yateemi Sy Bacha Lay
Yeh Akhri Shab Hai
Tum Dhundo Gi Hum Ko
Hum Laot Ky Ghar Na Ayen Gy

Tarhpo Gi Yahan Tum Bhi Wahan Dasht Mein Hum Bhi
Hum Dono Ko Sehny Hain Yeh Furqat Ky Sitam Bhi
Yeh Akhri Shab Hai
Aa Beth Mere Pas Ab Khuwab Mein Hi Mil Payen Gy

Jee Bhar Ky Muhabbat Ka Main Izhar To Kar Lun
Aaghosh Mein Aa Jao Tumhen Pyar To Kar Lun
Yeh Akhri Shab Hai
Dill Tham Lo Beta Hum Tum Sy Juda Ho Jayen Gy

Woh Aon O Muhammad Hon Woh Qasim Hon Keh Akbar
Hurr Hon Keh Habib Ibne Mazahir Hon Keh Asghar
Yeh Akhri Shab Hai
Dy Dy Ky Dilasy Maqtal Mein Sabhi So Jayen Gy

Na Dhoop Ki Shiddat Sy Na Tarhpo Gi Sitam Sy
Han Pyas Ka Shikwa To Karo Gi Kabhi Hum Sy
Yeh Akhri Shab Hai
Kal Tery Chacha Jan Jab Pani Leny Jayen Gy

Seeny Py Kabhi Aa Ky Tujhy Sona Parhy Ga
Pehloo Mein Phuphi Jaan Ke Tujhy Sona Parhy Ga
Yeh Akhri Shab Hai
Aa Seeny Py So Ja Kal Yeh Bhi Nahi Keh Payen Gy

Ab Tera Muqaddar Hai Safar Aur Aseeri
Bazar Bhi Jana Hai To Zindan E Sitam Bhi
Yeh Akhri Shab Hai
Pehno Gi Rasan Jab Hum Tum Ko Bahot Yad Ayen Gy

Aadat Kahan Seeny Ky Siwa Sony Ki Beta
Chin Jaye Ga Kal Tujh Sy Tere Baba Ka Seena
Yeh Akhri Shab Hai
Hum Dagh E Yateemi Ay Beta Tujhy Dy Jayen Gy

Jumly Yeh Shah E Deen Ky Fughan Ban Gaye Mazhar
Jo Nohay Ki Soorat Mein Hai Irfan Ky Lab Par
Yeh Akhri Shab Hai
Kal Hum Na Rahen Gy Is Khak Mein Hum So Jayen Gy

دسویں کے سحر ہونے سے پہلے
بیٹی کو بلایا بابا نے
اور رو کے یہ کہا
آ سینے پہ سو جا آخری باریہ آخری شب ہے کل ہم نہ رہیں گے
اس خاک میں ہم سو جائیں گے
بہت دور چلے جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

اس دشت میں سوئیں گے ترے چاہنے والے
اللہ تجھے بیٹا یتیمی سے بچا لے
یہ اخری شب ہے
تم ڈھونڈو گی ہم کو
ہم لوٹ کے گھر نہ آئیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

تڑپو گی یہاں تم بھی وہاں دشت میں ہم بھی
ہم دونوں کو سہنے ہیں یہ فرقت کے ستم بھی
یہ آخری شب ہے
آ بیثھ میرے پاس اب خواب میں ہی مل پا‏ئیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

جی بھر کے محبت کا میں اظہار تو کر لوں
آغوش میں آ جاو تمھیں پیار تو کر لوں
یہ آخری شب ہے
دل تھام لو بیثا ہم تم سے جدا ہو جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

وہ عون و محمد ہوں وہ قاسم ہوں کہ اکبر
حر ہوں کہ حبیب ابن مظاہر کہ اصغر
یہ آخری شب ہے
دے دے کے دلاسے مقتل میں سبھی سو جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

نہ دھوپ کی شدت سے نہ تڑپو گی ستم سے
ہاں پیاس کا شکوہ تو کرو گی کبھی ہم سے
یہ آخری شب ہے
کل تیرے چچا جان جب پانی لینے جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

سینے پہ کبھی آ کے تجھے سونا پڑے گا
پہلو میں پھوپھی جاں کے تجھے سونا پڑے گا
یہ آخری ‎شب ہے
آ سینے پہ سو جا کل یہ بھی نہیں کہہ پائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

اب تیرا مقدر ہے سفر اور اسیری
بازار بھی جانا ہے تو زندان ستم بھی
یہ آخری شب ہے
پہنو گی رسن جب ہم تم کو بہت یاد آئیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

عادت کہاں سینے کے سوا سونے کی بیثا
چھن جا‏ئے گا کل تجھ سے ترے بابا کا سینہ
یہ آخری شب ہے
ہم داغ یتیمی اے بیثا تجھے دے جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

جملے یہ شاہ دیں کے فغاں بن گئے مظہر
جو نوحے کی صورت میں ہے عرفان کے لب پر
یہ آخری شب ہے
کل ہم نہ رہیں گے اس خاک میں ہم سو جائیں گے

بہت دور چلے جائیں گے
سکینہ بابا
بہت دور چلے جائیں گے

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button